بی آر ڈی میڈکل کالج گورکھپور میں:اڑتالیس گھنٹوں میں تیس بچوں کی موت

گورکھپور: بابا راگھو سوامی میڈیکل کالج (بی آر ڈی میڈیکل کالج) میں معصوموں کی موت کا سلسلہ اب بھی تھمتا نظر نہیں آرہا. 1 نومبر سے 3 نوبر کے درمیان 48 گھنٹوں میں کل 30 معصوموں کی موت اس بات کی گواہی دیتی ہے کہ یہاں سب کچھ ٹھیک نہیں چل رہا.

تاہم، میڈکل کالج کے انتظامیہ کا خیال ہے کہ اینسسفیلائٹس (دماغی بخار)سے موت کی تعداد کم ہوگئی ہے. لیکن کالج کے لئے ذمہ دار یہ بھی کہہ رہے ہیں کہ یہ موت معمول نہیں کی جا سکتی.
قابل ذکر ہے، کہ گورکھپور کا بی آر ڈی میڈیکل کالج اس وقت شہ سرخیوں میں آیا تھا، جب اگست ماہ میں آکسیجن کی کمی کی وجہ سے 60 سے زائد بچوں کی موت ہو گئی تھی. اس معاملے نے کافی طول پکڑا تھا اور بی آر ڈی کے اس وقت کے پرنسپل ڈاکٹر راجیو مشرا، ان کی بیوی ڈاکٹر پورنما شکلا، ڈاکٹر کفیل خان سمیت کل 9 لوگوں کو جیل جانا پڑا. اس کے باوجود، ہر روز معصوم افراد کی موت ہو رہی ہے. ان کی موت سے جہاں عام لوگ حیران ہیں وہیں سابق میں اسے عام اموات بتانے والا بی آر ڈی میڈیکل کالج انتظامیہ بھی اب اسے عام نہیں مان رہا ہے۔
بی آر ڈی میڈیکل کالج کے پرنسپل ڈاکٹر پی کے سنگھ کے حوالے سے ڈاکٹر ڈی کے شریواستو نے بتایا، کہ ‘1 نومبر کی رات 12 بجے سے 3 نومبر کی رات 12 بجے تک 48 گھنٹے میں کل 30 بچوں کی اموات ہوئی ہیں. انہوں نے بتایا، کہ بی آر ڈی کالج میں 1 نومبر کی رات 12 بجے سے 3 نومبر کی رات 12 بجے تک این آئی سی یو (نیو نیٹل یونٹ) میں کل 15 بچوں کی موت ہوئی ہے. ایک ہی وقت میں، پی آئی سی یو (پیڈیا) میں 15 بچے ہلاک ہوئے. انہوں نے بتایا کہ 1 نومبر کی رات 12 بجے سے 2 نوبر کی رات 12 بجے تک این ایس آئی یو میں 7 اور پ? ایس ایس یو میں 5 بچوں کی اموات ہوئیں. تو وہیں، 2 نومبر کی رات 12 بجے سے 3 نوبر کی رات 12 بجے تک این یو ایس آئی میں 8 اور پ? آئی ایس یو میں 10 بچوں کی اموات ہوئی ہیں.
ڈاکٹر ڈی کے شریواستو نے بتایا کہ 1 نومبر کی رات 12 بجے سے 2 نوبر کی رات 12 بجے تک این آئی ایس یو میں 15 نوزائیدہ بھرتی اور 79 بچے بیڈ پر تھے. اسی وقت، پی آئی او یو میں 30 بچوں کو بھرتی ہوئی اور 217 بستر 2 نومبر کی رات 12 بجے سے 3 نوبر کی رات 12 بجے تک این ایس یو آئی میں 10 نئے مریض داخل اور 72 بیڈ پر تھے. جبکہ پی آئی ایس یو میں 36 داخلہ اور 185 بستر تھے.
حیرت انگیز بات یہ ہے کہ ڈاکٹر ڈی.سی.شیروسٹاس نے بتائی ہے کہ یہاں آنے والی بچوں میں سے 40 سے 50 فی صد بچے ہیں. تاہم، وہ کہتے ہیں کہ یہ دیگر میڈیکل کالجوں کے اعداد و شمار کے برابر ہے. 1 جنوری سے، اینسفالائٹس کے 1،870 مریضوں کو بی آر ڈی میڈیکل کالج میں داخلہ دیا گیا ہے، جن میں سے 404 ہلاک ہوئے ہیں، جبکہ 1،255 کو علاج کرنے کے بعد ان کے گھر چلا گیا. نوزائیدہ بچوں کی موت پر، وہ کہتے ہیں کہ ‘نوزائیدہ بچہ بہت سنگین بیماری ہے، لہذا اس سے نجات حاصل کرنا مشکل ہو جاتا ہے’.
سدھارتھ نگر سے آئے سراج بتاتے ہیں کہ ان کے 5 سالہ بیٹے پانچ دن کے لئے یہاں ہیں. اس کی حالت پہلے ہی ٹھیک ہے. وہ امید کرتے ہیں کہ وہ ٹھیک ہوں گے. اسی وقت صدیہ پور نگر کی 4 سالہ لڑکی چاندنی یہاں ایک مہینے سے زائد عرصہ تک ہیں. بڑی بیٹی لچھمی (6 سال) بھی یہاں بھرتی کی جاتی ہے. سنجنا نے کہا کہ ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ وہ زندہ رہنے کے قابل نہیں ہوں گے. اسی وقت خاندان نے چاند کی روشنی کے ساتھ گھر جانے کی امید کھو دی ہے.
بی آر ڈی میڈیکل کالج میں ہر روز معصوم افراد کی موت کی تعداد حیرت انگیز ہے. اب میڈکل کالج انتظامیہ نے یہ بھی اعتراف کیا ہے کہ یہ عام موت نہیں کہا جاسکتا ہے. اس کے باوجود، یوگی حکومت کسی فرم کا انتظام کرنے میں ناکام رہی ہے. بچوں کی موت کو روکنے کے لئے یہ ایک بڑا سوال ہے.

Leave a Comment

Copyright © Dailyaag - All Rights Reserved

Scroll to top