جی ایس ٹی: چھوٹے کاروباری اداروں، صارفین کو بڑی راحت، ہر ماہ رٹرن کی چھوٹ

نئی دہلی: کو اشیا ٹیکس اور سروس ٹیکس (جی ایس ٹی) کونسل کے 22 ویں اجلاس منعقد کیا گیا. اجلاس میں مرکزی خزانہ وزیر ارون جیٹلی کی سربراہی کی گئی. اجلاس میں، چھوٹے تاجروں کو بہت سی راحت ملی ہے. اس کے تحت، اب ہر ماہ واپسیوں سے چھٹکارا دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے.

واضح طور پر، جی ایس ایس کے عمل سے، مودی حکومت مسلسل تنقید کا شکار رہا ہے. اس میں، وہ مخالفین کے ساتھ ساتھ اپنے دوستوں کے ہدف کے ساتھ رہا ہے. ان چھوٹ کے ساتھ، چھوٹے کاروباری افراد، دیوان کے برآمد کنندگان اور صارفین رنگائ بننے جا رہے ہیں. ملاقات کے بعد، جیٹلی نے کہا، ‘کچھ تکنیکی مسائل ہیں جو آہستہ آہستہ ختم ہو جائیں گی. خطاب کرتے ہوئے، ‘اپریل 2018 تک تمام برآمد کنندگان کے لئے ای میل کی جائے گی.’

یہ کچھ وقت لگے گا، لیکن ..

وزیر خزانہ جیٹلی نے کہا کہ، “جی ایس ٹی کونسل میں برآمد کنندہوں کی مسئلہ پر تبادلہ خیال کیا گیا. جی ایس ٹی لگنے کی وجہ سے برآمد کنندگان کا کریڈٹ کافی بلاک ہو رکھا ہے، جس کا اثر ان کی کیش لیکویڈیٹی پر پڑا ہے. ‘ارون جیٹلی نے کہا، کہ’ اس کا ڈیٹا تو دستیاب ہے لیکن فوری طور پر ری ادائیگی نظام آہستہ آہستہ بن رہی ہے. یہ تھوڑا وقت لگے گا. یہ فیصلہ کیا گیا ہے کہ رقم کی واپسی کے عمل اکتوبر 10 سے جولائی کے بعد اور 18 اکتوبر سے واپسی کی کارروائی کے بعد، برآمدکنندگان کی جانچ پڑتال کی جائے گی. یہ صرف لامحدود انتظام ہوگا.

چھوٹے کاروبار کے لئے بڑا منافع

کونسل کی اس میٹنگ نے چھوٹے تاجروں کو فائدہ اٹھایا ہے. کونسل نے 1 کروڑ رو. روپے کی تشکیل سکیم کے فائدہ اٹھانے کے لئے حد بڑھا دی ہے. اس حد سے قبل 75 لاکھ رو. کے لئے تجویز کی گئی تھی. اس وضاحت کے تحت، ٹیکس کی شرح کم ہے. اس اسکیم کے تحت، تاجروں کو صرف دو فیصد ٹیکس ادا کرنا پڑتا ہے.

انکو ملے گی راحت

جی ایس ٹی کے تحت، اس اسکیم میں تین قسم کے لوگ آتے ہیں. پہلا کاروباری شخص جو ایک فی صد ٹیکس ادا کرے گا، دوسرا مصنوعی زمرہ، جس میں 2 فی صد ٹیکس اور تیسری ریستوران کا کاروبار ادا کرے گا، جو 5 فی صد ٹیکس ادا کرے گا. اب گنجائش بڑھتی ہوئی تین اقسام کی کاروباری مدد میں مدد ملے گی. اس سکیم میں خدمات شامل نہیں ہیں.

اب واپس آ جائیں گے 3 ماہ تک

وزیر خزانہ جیٹلی نے کہا کہ جی ایس ٹی کے تحت، اب تک ٹیکس کا مجموعہ اس بات سے پتہ چلتا ہے کہ بڑے کاروبار بڑے لوگوں سے آ رہا ہے. تاہم، جی ایس ٹی کے نظام میں درمیانی اور چھوٹے کاروباری افراد کی تعداد بہت زیادہ ہے. اس طرح، انہیں جی ایس ایس کی پیچیدگیوں سے پریشان ہونا پڑتا ہے. ان سے ریلیف دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے تا کہ تین ماہ کے لئے واپسی دینے کے لئے تاجروں کو 1.5 کروڑ روپے کی واپسی کی اجازت دی جائے. “جیٹلی نے کہا کہ اس سے تقریبا 90 فیصد ٹیکس دہندگان کو امداد ملے گی.”

ریلف چارج پر پایا جا سکتا ہے

جی ایس ٹی کونسل نے موڈ میں بھی ریورس چارجز پر امداد فراہم کرنے کے لئے بھی دیکھا ہے. یہ خیال ہے کہ کونسل اگلے اجلاس میں اس پر کوئی اہم فیصلہ کرسکتا ہے. آپ اس طرح کے ریورس چارج سمجھ سکتے ہیں جب آپ کسی مجاز ڈیلر سے سامان خریدتے ہیں تو آپ کو ٹیکس ادا کرنا ہوگا اور اس پر ادا کردہ اضافی ٹیکس کا دعوی کرنا پڑے گا.

Leave a Comment

Copyright © Dailyaag - All Rights Reserved

Scroll to top