آئی ایس آئی ایس کے وجود کے لئے لڑ رہا: امریکی

واشنگٹن. امریکہ کا کہنا ہے کہ کبھی 110 ممالک کے قریب 40،000 جنگجوؤں کے ساتھ قہر برپانے والا دہشت گرد گروپ اسلامک اسٹیٹ اب اپنے وجود کے لئے لڑ رہا ہے اور عراق اور شام کے کئی حصوں پر اس کا کنٹرول ختم ہو چکا ہے.

آئی ایس آئی ایس کا مقابلہ کرنے کے لئے بنائے گئے عالمی اتحاد کے لئے صدر کے خصوصی ایلچی بریٹ مےكگرك نے ہفتہ کو کہا کہ آئی ایس آئی ایس کے پاس کسی وقت دنیا بھر میں 110 ممالک کے چالیس ہزار سے زیادہ جنگجو تھے. وہ شام اور عراق میں پھیلے ہوئے تھے اور کئی حصوں میں ان کا کنٹرول تھا.

انہوں نے کل یہاں نامہ نگاروں کو بتایا، وقت گزر جاتا گیا، اب عراق اور شام کے قریب 70،000 مربع کلومیٹر کے علاقے سے ان کا قبضہ چھوٹ گیا ہے. عراق کا تقریبا 78 فیصد علاقے کبھی ان کے قبضے میں تھا پر اب آزاد ہو چکا ہے اور اسی طرح شام کے قریب 58 فیصد علاقے پر سے ان کا کنٹرول ختم ہو گیا ہے. مےكگرك نے کہا کہ اہم بات یہ ہے کہ جن علاقوں سے ایک بار ان کا قبضہ ہٹا، وہ انہیں دوبارہ حاصل نہیں کر سکے.

انہوں نے کہا کہ امریکی قیادت والی اتحادی افواج نے جس حصے کو بھی آئی ایس آئی ایس کے قبضے سے واپس لیا، دہشت گرد گروپ اس حصے پر دوبارہ قبضہ نہیں کر پایا. انہوں نے پھر کہا کہ ہم اس بات کا یقین کرنے کے لئے جا رہے ہیں.

انہوں نے کہا کہ قریب پچاس لاکھ لوگ Isis کے کے کنٹرول میں رہ رہے تھے لیکن اب وہ لوگ کھلی ہوا میں سانس لے رہے ہیں. بریٹ نے کہا کہ اتحادی افواج نے زمین پر کامیاب مہم چلا کر انہیں مفت کرا لیا ہے. انہوں نے کہا کہ کبھی امریکہ سمیت مختلف جگہوں پر بڑے حملے کی سازش رچنے والا Isis کے اب اپنے وجود کے لئے لڑ رہا ہے.

Copyright © Dailyaag - All Rights Reserved

Scroll to top