ہر کام میں ساتھ دینے والے نسیم الدین صدیقی بہوجن سماج پارٹی سے نکالے گئے

لكھنو؛بہوجن سماج پارٹی کے قدآور لیڈر نسیم الدین صدیقی اور ان کے بیٹے افضل کو بدھ کو پارٹی سے نکال دیا گیا. بی ایس پی کے نیشنل جنرل سکریٹری ستیش چندر مشرا نے نسیم الدین پر ٹکٹ دینے کے بدلے پیسہ لینے، ڈسپلن شکنی اور پارٹی مخالف سرگرمیوں میں ملوث ہونے کا الزام لگایا ہے. گمنام پراپرٹی ہونے کا مل رہا تھا ان پٹ …


بہرحال نسیم الدین کے خلاف اندر ہی اندر بہت دنوں سے کھچڑی پک رہی تھی اور پارٹی کے جنرل سیکریٹری ستیش چند مشرا نسیم اور نسیم الدین صدیقی میں کشیدگی کوئی نیا واقعہ نہیں ہے۔نسیم الدین کے متعد د ساتھیوں نے آج صدیقی کی محبت میں پارٹی کو خیر باد کہہ دیا اور کہا ہے کہ اب انکو کھل کر بہن جی اور بی ایس پی کے اندر کیا ہو رہا تھا اور کیا ہو رہا ہے،اسکا انکشاف کر دینا چاہئے۔
سیاسی مبصرین کا کہنا ہے کہ بہوجن سماج پارٹی اور مایاوتی وغیرہ کے زیادہ تر کاموں میں خود نسیم الدین صدیقی ملوث تھے اور پارٹی کی قیادت نے موقع غنیمت جان کر انکو دودھ کی مکھیکی طرح نکال باہر کیا۔

– ستیش چندر مشرا نے پریس کانفرنس کر کہا، ” نسیم الدین کے پاس کئی طرح کی گمنام پراپرٹی ہونے کا ہمیں مسلسل ان پٹ مل رہا تھا. ہمیں اطلاع ملی تھی کہ وہ بہت سے لوگوں کے ساتھ مل کر غیر قانونی طریقوں سے پراپرٹی جٹا رہے تھے، غیر قانونی بوچڑكھانے بھی چلا رہے تھے، اسی لیے پارٹی نے انہیں باہر کیا گیا ہے. ”
– ” بی ایس پی کا کوئی بھی کارکن یا لیڈر اگر گمنام پراپرٹی بلند اور غیر قانونی بوچڑكھانے چلانے میں ملوث پایا جاتا ہے تو کارروائی کی جائے گی. ”
نسیم الدین صدیقی سے قربت رکھنے والوں کا یہ کہنا ہے کہ ستیش چند مشرا پارٹی پر پوری طرح سے قبضہ کر چکے ہیں اور انکو کوئی بھی پرانا ساتھی برداشت نہیں ہے۔ انہوں نے جو بوچر خانہ کا الزام لگایا ہے وہ انکی بھجپائی فکر کی عکاسی ہے۔
بیٹے نے کہا پریس کانفرنس کریں گے
– نسیم الدین کے بیٹے افضل صدیقی نے کہا، ” ہم نے پوری وفاداری کے ساتھ کام کیا ہے، یہ سب جانتے ہیں. اس کے باوجود ایسا ڈسيجن لیا گیا ہے. ہمیں نہیں معلوم ایسا کیوں ہوا. ہم پریس کانفرنس کے ذریعے اپنی بات سب کے سامنے رکھیں گے. ”

نسیم الدین کے سپورٹ میں پارٹی رہنماؤں کا استعفی
– وہیں، نسیم الدین کے سپورٹ میں بی ایس پی کے کئی لیڈر پارٹی چھوڑ رہے ہیں. ان کے قریبی سابق ایم ایل سی اور چھتریہ منڈل کے ریاستی کواڈینیٹر پردیپ سنگھ نے پارٹی چھوڑ دی ہے. اس کے علاوہ آفس سکریٹری لکشمن بھارتی، سابق بی ایس پی ایم ایل اے ارشاد خان، بی ایس پی لیڈر راجیو بالميك نے بھی پارٹی سے استعفی دے دیا.
کیا کہنا ہے بی جے پی کا؟
– بی جے پی کے اسٹیٹ ترجمان راکیش ترپاٹھی نے کہا، ” بی ایس پی میں شکست کی وجہ افرا تفری مچی ہوئی ہے. مایاوتی مایوس ہیں اور ہار کی وجوہات کو قبول کرنے کے لئے تیار نہیں ہیں. وہ کبھی ہار کا ٹھیکرا وی ایم پر پھوڑتي ہیں تو کبھی نسیم الدین پر سنگین الزام لگا کر اپنی مایوسی دور کرنے کی کوشش کر رہی ہیں. ”

کون ہیں نسیم الدین صدیقی؟
– نسیم الدین کی پیدائش یوپی کے بندہ ضلع کے سیورا گاؤں میں ہوا تھا. آغاز میں ان کا کھیل کی طرف کافی جھکاو تھا. وہ والی بال کے نیشنل لیول کے کھلاڑی رہ چکے ہیں. اس کے علاوہ انہوں نے ریلوے کے ایک كنٹریكٹر کے طور پر بھی کام کیا.
– ١٩٨٨میں نسیم الدین نے اپنے سیاسی کیریئر کی شروعات کی، با ندہ میونسپل چیر مین کے عہدے کا انتخاب لڑا، لیکن ہار گئے. اس کے بعد اسی سال وہ بی ایس پی میں شامل ہو گئے. 1991 میں انہوں نے انتخاب لڑا جس میں انہیں کامیابی ملی. اگرچہ دو سال بعد 1993 میں ہوئے انتخابات میں انہیں شکست کا سامنا کرنا پڑا.

کابینہ وزیر بھی رہے
– جب مایاوتی ١٩٩٥ میں پہلی بار وزیر اعلی بنیں، تب نسیم الدین کو کابینہ وزیر بنایا گیا. اس کے بعد ٢١مارچ ١٩٩٧ سے ٢١ ستمبر١٩٩٧ تک مایاوتی کی مختصر مدت گورنمنٹ میں بھی وہ وزیر بنے. ٣ مئی ٢٠٠٢ سے ٢٩ اگست ٢٠٠٣ تک ایک سال کے لئے وہ کابینہ کا بھی حصہ رہے. اس کے بعد ١٣ مئی ٢٠٠٧ سے ٧مارچ ٢٠١٢ تک مایاوتی کی فل ٹائم گورنمنٹ میں بھی وزیر رہے.
تنازعات سےرها ہے ناطہ
– گزشتہ سال نسیم الدین کو بی جے پی لیڈر دياشنكر کی بیوی اور بچوں کے خلاف نازیبا زبان کے استعمال کی وجہ سے کافی مخالفت کا سامنا کرنا پڑا تھا. دياشنكر کی بیوی سواتی سنگھ نے ان کے خلاف پكسو ایکٹ کے تحت کیس درج کرایا تھا.
بیٹے کو سونپی تھی ویسٹ یوپی کی کمان
– اسی سال ہوئے یوپی اسمبلی انتخابات میں نسیم الدین نے اپنے بڑے بیٹے افضل کو انتخابی میدان میں اتارا تھا. افضل کو ویسٹ یوپی میں انتخابات کی مہم کی کمان دی گئی تھی، تاکہ وہ وہاں پر مسلم ووٹوں کو متحرک کر سکیں.
– اس سے پہلے افضل ٢٠١٤ میں فتح پور لوک سبھا سیٹ سے الیکشن لڑے تھے. اس کے بعد وہ اپنے والد کے ساتھ پارٹی کے پروگرام میں ہی نظر آتے تھے.
سیاسی پنڈتوں کا کہنا ہے کہ نسیم الدین کو قربانی کا بکرا بنایا جا رہا ہے کیونکہ انکے پاس کئی ایسے راز ہیں جو قیادت کو مشکلات میں مبتلا کر سکتے ہیں۔بہرحال پارٹی اس اقدام کے بعد مزید کمزور نظر آئی ہے اور اسکے امکانات ہیں کہ کچھ لوگ ٹوٹ کر بھارتیہ جنتا پارٹی میں شمولیت نہ اختیار کر لیں۔ یہ بھی دیکھنا ہے کہ نسیلم الدین اور انکے صاحبزادے اپنی پریس کانفرنس میں کیا ایسے پول کھولیں گے جو بہن کی اور انکی پارٹی کی رسوائی کا سبب بنیں۔

Leave a Comment

Copyright © Dailyaag - All Rights Reserved

Scroll to top