نہرو نے ہمیں کمترآنکا تھا، مودی وارنںگ نظر انداز نہ کریں: ڈوكلام پر چین

بیجنگ. چین کے سرکاری میڈیا نے منگل کو کہا کہ اگر بھارت ڈوكلام تنازع پر انتباہ کو اسی طرح نظر انداز کرتا رہا تو بیجنگ ضروری جوابی قدم اٹھائے گا. میڈیا نے یہ بھی کہا ہے کہ بھارت 1962 کی جنگ کے سبق بھول گیا ہے، نہرو نے چین کو کمتر فیصلہ تھا، لیکن مودی وارنںگ نظر انداز نہ کریں. بتا دیں کہ سکم سیکٹر میں بھوٹان ٹراجكشن کے پاس چین ایک سڑک بنانا چاہتا ہے اور بھارت اس کی مخالفت کر رہا ہے. قریب 2 ماہ سے اس علاقے میں بھارت اور چین کے فوجی آمنے سامنے ہیں. چین نے ہندوستان سے کہا ہے کہ وہ علاقے سے اپنے فوجیوں کو فوری طور پر واپس بلائے، لیکن بھارت نے اس سے انکار کر دیا ہے. چین کے لوگوں کو حکومت پر اعتماد …


– چین کے سرکاری اخبار گلوبل ٹائمز نے اپنے اےڈيٹوريل میں کہا، “سکم کے ڈوكلام میں صورتحال بے قابو ہو رہی ہے اور اگر نریندر مودی حکومت مسلسل اسيتره ہماری انتباہ کو نظر انداز کرتی رہی، تو بیجنگ علاقے پر اپنا حق بحال کرنے کے لئے ضروری جوابی قدم اٹھائے گا. “
– اخبار نے چین کو ایک طاقتور پڑوسی بتاتے ہوئے کہا ہے، “بارڈر پر تعطل قریب 2 ماہ سے جاری ہے. دنیا نے چین کی امن اور اس معاملے کی وجوہات کو اسے سمجھتے ہوئے دیکھا ہے. چین کے لوگ خطرے اور غیر یقینی صورتحال کے عادی ، انہیں اپنی حکومت پر اعتماد ہے کہ وہ ہر ممکن طریقوں سے اس بحران کو ختم کرے گی. “

نہرو نے سوچا تھا کہ چین حملہ نہیں کرے گا
– اخبار کے مطابق، “کورس کے، چین جنگ کا خطرہ نہیں اٹھانا چاہتا ہے اور امید کرتا ہے کہ امن واپس آ سکتی ہے، چین-بھارت اچھی طرح سے رہ سکتے ہیں، لیکن اگر بھارتی فوجی چینی زمین پر مسلسل ٹھہرے رہے تو یہ ایک دوسرا معاملہ گے. “
– “بھارت نے 1962 میں سرحد پر مسلسل اشتعال انگیز سرگرمیاں کی. اس وقت جواہر لال نہرو حکومت نے یہ مانا تھا کہ چین حملہ نہیں کرے گا. نہرو حکومت نے علاقائی سالمیت (territorial integrity) کی حفاظت کے لئے چین کی حکومت کے عزم (determination) کو پختگی کو بے وقعت تھا کیونکہ بیجنگ گھریلو اور سفارتی بحرانوں میں پھنسا تھا. اس وقت چین گھریلو جنبش اور قدرتی آفات سے گزر رہا تھا، امریکہ سے اس کی دشمنی تھی، اگرچہ سوو ت یونین کے ساتھ چین کے سلسلے ٹھیک ہونے شروع ہو گئے تھے. “

Copyright © Dailyaag - All Rights Reserved

Scroll to top