مسلم لیڈر سمیت پانچ سو  کارکنوں نے بہوجن سماج پارٹی کو کہا الوداع، پارٹی مشن سے پیچھے ہٹ گئی؟

کانپور: (اردو ٹائمز بیورو)انتخابات میں کراری شکست کے بعد بہوجن سماج پارٹی (بی ایس پی) نے نسیم الدین صدیقی کو باہر کا راستہ دکھا دیا.
نسیم الدین کو پارٹی سے نکالے جانے کے بعد بدھ (17 مئی) کو مسلم طرف ان کی حمایت میں اترا اور بی ایس پی کے شہر سیکرٹری سمیت قریب ٥٠٠ کارکنوں نے پارٹی سے استعفی دے دیا. مسلم طرف کا الزام ہے کہ بی ایس پی سربراہ مایاوتی صرف مسلمانوں کا استعمال  کر رہی ہے، جس کا انکشاف نسیم الدین نے کیا ہے.
کانپور میں بی ایس پی سے پہلے لوک سبھا انتخابات میں امیدوار سلیم احمد نے اپنے حامیوں کے ساتھ استعفی دے دیا تھا. بی ایس پی سپریمو نے پارٹی کی نئے سرے سے تشکیل کرتے ہوئے کانپور سے اسمبلی کا انتخاب لڑے حاجی محمد وسیق کو شہر سیکرٹری بنایا تھا، لیکن وسيك نے نسیم الدین کی حمایت کرتے ہوئے عہدے سے استعفی دے دیا.
کارکنوں کا وقار پارٹی میں محفوظ نہیں
حاجی  کا کہنا ہے کہ بی ایس پی کا جو مشن تھا اس وہ پیچھے ہٹ گئی ہے. بی ایس پی کارکنوں کا سوابھیمان پارٹی میں محفوظ نہیں ہے. نسیم الدین پر غلط الزام لگائے گئے تو تمام لوگ استعفی دے رہے ہیں. پارٹی وقت- وقت پر مسلم پارٹی کو كوستي رہتی ہے. ووٹ دینا عوام کا حق ہے ہم لوگ اپنی کوشش ہے لیکن بعد میں الزام لگتا ہے کہ مسلم سماج نے ووٹ نہیں دیا.

Copyright © Dailyaag - All Rights Reserved

Scroll to top