چھاپے کے بعد، پٹرول پمپ بند کرنے سے شہری پریشان

اتر پردیش اسپیشل ٹاسک فورس کی جانب سے اپریل میں پٹرول پمپوں پر چھاپے ماری کی کارروائی کے بعد مہر بند ہوئے پٹرول پمپوں کے شروع نہ ہونے سے شہریوں کو مشکلات اور تکلیف کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے.

 

عوام کو ہو رہی مشکلات پر سماجی کارکن اور وکیل محمد حیدر رضوی نے وزیر اعلی سے معاملے کا نوٹس لیتے ہوئے مجرم پیٹرول پمپ مالکان کے خلاف مؤثر كاررواري کرنے اور عوام کو مشکل سے نجات دلانے کے لئے اختیاری نظام کو یقینی بنانے کا مطالبہ کیا ہے.
واضح ہو کہ ایس ٹی ایف نے پٹرول پمپو ں پر کم تولنے کی شکایت کے بعد دارالحکومت کے کئی پٹرول پمپوں پر چھاپہ مار مشینوں کے میٹر / نوزل ​​/ مشینوں سے چھیڑ چھاڑ پکڑی تھی، جس سے بڑا گھوٹالہ اجاگر ہوا تھا.

 وزیر اعلی سے زور دیا کہ لوگوں کو مشکلات سے آگاہ کیا جاسکتا ہے اور لوگوں کو فوری طور پر کارروائی کرنے کے لئے زور دیا ہے تاکہ لوگوں کو امداد ملے. انہوں نے کہا کہ اس سلسلے میں، وزیر اعلی کے پورٹل پر بھی شکایت درج کی گئی ہے جس میں چیف سکریٹری فوڈ اور لاجسٹکس کو بھیج دیا گیا ہے. مسٹر حیدر نے کہا کہ آپریشن کے پانچ ماہ بعد تاخیر کے بعد علاقائی عوام کو بہت تکلیف ملتی ہے.
حکومت کے متبادل انتظامات کے ساتھ، دارالحکومت کے شہروں، خاص طور پر پرانے لکھنؤ کے رہائشیوں کو بڑی تکلیف کا سامنا کرنا پڑتا ہے. پرانے لکھنؤ کے رہائشیوں کو پیٹرول اور ڈیزل لے جانے کے لئے کئی کلو میٹر جانا پڑے گا، جو صرف وقت ضائع نہیں بلکہ ذہنی اور اقتصادی نقصان بھی ہے.

سماجی کارکن اور وکیل محمد حیدر رضوی

مسٹر حیدر نے کنگ جارج میڈیکل یونیورسٹی کے پاس پڑنے والے & پٹرول پمپو میڈیکل کالج کے ٹھیک سامنے، كونےشور چوراہا اور ہاتھی پارک کے قریب واقع پمپو کا ذکر کیا.

انہوں نے کہا کہ ان پٹرول کے پمپوں کی بندش کی وجہ سے نہ صرف ڈاکٹروں، مریضوں اور پیرامیاتی عملے اور مریضوں کے مریضوں بلکہ پورے علاقے میں بڑی مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے.

انہوں نے کہا کہ ضروری چیز ایکٹ 1955 کی دفعہ 2 کے تحت پٹرولیم اشیاء مذکورہ ایکٹ کے تحت ضروری چیز کی تعریف میں آتے ہیں، جسے مسلسل مہیا کرانا حکومت کی ذمہ داری ہے.

Leave a Comment

Copyright © Dailyaag - All Rights Reserved

Scroll to top