ایودھیا کیس: سپریم کورٹ نے جرح کے بعد 5 دسمبر تک سماعت ملتوی کی

نئی دہلی: ایودھیا میں متنازعہ زمین کے مالکانہ حق کو لے کر سپریم کورٹ میں جمعہ (11 اگست) کو سماعت ہوئی. کورٹ نے اس معاملے سے منسلک دستاویز اور گواہیوں کے ترجمہ کے لئے 12 ہفتوں کا وقت دیا ہے. کیس کے ایک فریق رام للا براجمان کے مطالبے پر کورٹ نے انہیں چار ہفتوں کا وقت دیا. ساتھ ہی سپریم کورٹ نے معاملے کی اگلی سماعت 5 دسمبر طے کی ہے. کورٹ نے صاف کیا کہ کسی بھی پارٹی کو اب آئندہ مزید مہلت نہیں دی جائے گی اور نہ ہی کیس ملتوی کیا جائے گا.

یاد رہے اس معاملے سے منسلک 9،000 صفحات کے دستاویزات اور 90،000 صفحات میں درج گواہیاں متعدد، فارسی، سنسکرت، عربی سمیت مختلف زبانوں میں ہیں، جس پر سنی وقت بورڈ نے کورٹ سے ان دستاویزات کو ترجمہ کرنے کی مانگ کی تھی.

تشار مہتہ نے رکھا یوپی حکومت کا موقف
جمعہ کو ہوئی سماعت میں یوپی حکومت کی طرف سے ایسوسی ایٹ سالیسٹر جنرل تشار مہتہ نے سرکاری موقف پیش کرتے ہوئے کیس کی سماعت جلد مکمل کرنے کا مطالبہ کیا۔ جبکہ، سنی وقف بورڈ نے اس بات پر اعتراض کیا. سنی وقف بورڈ کا کہنا ہے کہ بغیر مناسب عمل کے سماعت کی جا رہی ہے.

سبل نے بھی رکھا طرف
دوسری طرف، کیس میں ایک مدعی سبرامنیم سوامی نے متنازعہ مقام پر لوگوں کو عبادت کرنے کا حق دینے کا مطالبہ کیا ہے. اس پر سپریم کورٹ کی بنچ نے تمام وادیوں کو یہ واضح کرنے کو کہا ہے کہ کون کس کی جانب سے فریق ہے. اس پر سنی بورڈ کی جانب سے پیروی کر رہے سینئر وکیل کپل سبل نے کہا کہ ‘اس معاملے کے کئی فریقین کا انتقال ہو چکا ہے، اس صورت میں ان کو تبدیل کرنے کی ضرورت ہے. انہوں نے یہ بھی کہا، کہ اس معاملے سے منسلک دستاویزات کئی زبانوں میں ہیں، ایسے میں سب سے پہلے ان کا ترجمہ کیا جانا چاہئے. ‘

شیعہ وقف بورڈ کا پینچ
غور طلب ہے، کہ اس اہم سماعت سے ٹھیک پہلے شیعہ وقف بورڈ نے عدالت میں عرضی دے کر معاملے میں نیا سکرو ڈالا. شیعہ بورڈ نے تنازعہ میں فریق ہونے کا دعوی کیا تھا. بتا دیں، کہ شیعہ وقف بورڈ نے 70 سال بعد 30 مارچ 1946 کے ٹرائل کورٹ کے فیصلے کو چیلنج کیا ہے، جس میں مسجد کو سنی وقف بورڈ کی پراپرٹی قرار دیا گیا تھا.

Leave a Comment

Copyright © Dailyaag - All Rights Reserved

Scroll to top