داؤد کا ٹیپ آیا سامنے: کھولے بہت سے راز، مزید جانیے ڈان کی کالر ٹیون

نئی دہلی: 1993 ممبئی سیریل بلاسٹ کے اہم ملزم اور انڈر ورلڈ ڈان داؤد ابراہیم کو لے کر یہاں تک کہ اگر اب تک کئی بڑے انکشافات ہو چکے ہو لیکن اس بار ایک نجی چینل نے جو انکشاف کیا ہے وہ کافی چونکانے والا تو ہے ہی ساتھ ہی داؤد کی تکلیف یہ بھی واضح طور پر نظر آتی ہے.

در اصل، ایک نیوز چینل نے داؤد کا ایک ٹیپ ہونے کی بات کہی ہے، جس داؤد اپنے گرگےسے بہت سے مسائل پر بات کر رہا ہے، اسی کےکے ساتھ ساتھ حکومت ہند کی مہم پر بھی اپنا خوف محسوس کرا رہا ہے.

٢٠١٥ میں ریکارڈ کی جانے والی بات چیت کے ان ٹیپ میں میں داؤد کا ایک گرگا اس موسیقار ندیم کو لے کر ممکنہ قانونی خطرے کے بارے میں آگاہ کر رہا ہے. بات چیت میں، دونوں بالواسطہ خصوصی کوڈڈیوٹس استعمال کرتے ہیں. نڈیم سیفی کا حوالہ دیتے ہوئے ‘لندن دوست’ اور ‘استاد’ کی طرح.

دبئی سے داؤد کا ایک گرگا برطانیہ میں ندیم سیفی کی ممکنہ گرفتاری کی صورت میں اس انڈر گراؤنڈ کرنے کے پلان کے بارے میں بتا رہا ہے. ٩٠ کی دہائی میں شرون کے ساتھ ہٹ موسیقار رہ چکا ندیم سیفی طویل  عرصے سےبرطانیہ میں رہ میں رہا ہے.

حال ہی میں ممبئی کے تھانے سے گرفتار کیا گیا اقبال کاسکر کے قبول نامہ کے بعد جس نے دعوی کیا تھا کہ داؤد پاکستان میں عیش کر رہا ہے، اب ان ٹرسیپتس کالوں نے ان قیاس آرائیوں کو بھی مسترد کر رہا ہے کہ داؤد بیماریوں کی وجہ سے  آخری سانسیں لے رہا ہے .

ندیم پر داود اور گرگے کے بیچ کی  بات چیت

گرگا صاحب، لندن کا یہ دوست خطرے میں آ گیا ہے. یہاں، اس کی تیاری نے انہیں دو دن بڑھانے کے لئے دیا ہے.

داود- کون؟

گرگا – وہ بڑا ماسٹر میں نے سوچا کہ یہ آپ کی بات ہے. کیونکہ حالات بدتر ہوسکتے ہیں، لہذا ترجیح دی جاتی ہے … دو، تین دن. اس سے کہا گیا ہے کہ وہ اس کی حفاظت کو مضبوط کرے.

داود- ٹھیک ہے، ٹھیک ہے … وہ اپنے چشمے کے ساتھ ایک آدمی کے بارے میں بات کر رہا ہے. ٹھیک ہے؟

گرگا – جی، جی … کراچی والا چنا مرش ہے

داود- ٹھیک ہے، ٹھیک ہے … میں بولتا ہوں.

نیوز چینل کے ذریعہ دکھایا گیا آڈیو ٹیپ نے بتایا کہ داود نے اپنے فون کے ہندی فلم گانا کو کالر دھن رکھا ہے.

کشور کمار کی فلم، پریتما کے گیت، میں جو بولں۔۔ہاں تو ہاں  … داؤد کے موبائل فون کا کالر ہے.

داود اور گرگے کی پوری بات چیت

جاوید چنانی (داؤد کے گروہ) – سلام والیکم

داود- واعلیک السلام

گرگا – جی حضور

داؤد – جناب سو گئے تھے کیا

گرگا، ارے یہاں پر پابند ی ہے، صاحب، سوتے نہیں،  خدا کی قسم کیا شہر ہے یہ تو۔

داود – اچھا

گرگا: ہاں، یہاں تو اپنا کام  نہیں ہے. اپن تو دو دن میں تھک گئے،کل آجاونگا ، رات  کو واپس سوچ رہا ہوں

داود – اچھا

گرگا جی جی

داود۔پنگا نہیں لینا تیرے کو

گرگا جی ہاں صاحب … ہا ہا ہا … سر پنگا لیناے کو،کوئی دے تو۔۔۔

داود – اس کے بارے میں گفتگو … .. (داؤد اپنی بیوی ماہجبیں کو فون دیتا ہے)

جی ہاں ہاں جی ہاں

ماہ جبیں۔اسلام علیکم

گرگا- حال کیا ہے … سب اچھا ہے

مہاہ جبین- جی، خدا کا شکر ہے … آپ کیسے ہیں

گرگا- سب اللہ کا کرم ہے … حکم کیا ہے

ماہ جبیں ہنستے ہوئے … .. (ہنسی …)

گرگا- فکر مت کرو، فکر مت کرو … آپ  فکر مت کرو

ماہ جبیں ابھی  آنکھیں مجھے دکھاتے ہیں

گرگا- ارے آپ چھوڑوں نہ میرے سے بات کرو،انکی طرف دیکھو مت

ماہ جبیں۔اچھا تھیک ہے،انکو دیکھے بغیر ایک دم سے بولتی ہوں۔۔۔ٹھیک ہے تو کل میں آپ کو بتاونگی اپنے ایک پرس کے بارے میں

گرگا- ٹھیک ہے … مجھے بتانا آپ کو … آپ مجھے کل بارہ بجے ،ایک،دو بجے دوپہر تک تک بتاؤ. شاید میں رات کو ہی سے واپس آؤں

مای جبیں۔بس یہ کہ میں آپ کے موبائل پر ایس ایم ایس بھیج دونگی …اچھا ہیلو

شاہد کے برانڈ کے شینلل کے شو روم میں جاؤ … شنل کا نام بھی اس کے شو روم  کا ہے … وہ کہاں ہے … میں اسے کل بتاؤں گا … ہیلو اچھا

گرگا – تم کیا کہہ رہے ہو

مجھے تاریخ بتائیں … طارق بھائی ہا … وہ جانتے ہیں کہ بیگ کیا ہے، جو لعنت بھی ہے …. سب کچھ جانتا ہے

گرگا: تم مجھے چھوڑ دو، میں اپنا کام جانتا ہوں

صرف مجھے – میں ان سے بات کروں گا جس نے بلیک رنگ کا سیاہ بیگ رکھا ہے

گرگا -بت فکر رہو

ماہ جبیں÷مطلب  رکھوایا نہیں آنے والا، آنے والا، کچھ دنوں میں، وہ بول رہے تھے آنا والا ہے۔تو میرے خیال سے آہی گیا ہوگا۔

گرگا – میں آپ کو صبح میں بتاؤں گا اور آپ کو بتاؤں گی، آپ پریشان نہ ہوں

مکاہ جبیں – ٹھیک  ہےشکریہ (فون داؤد کو دیتا ہے)

Leave a Comment

Copyright © Dailyaag - All Rights Reserved

Scroll to top