ہندوستان کی بڑی جیت، بین الاقوامی عدالت نے جادھو کی پھانسی کی سزا پر لگائی روک

پاکستان میں موت کی سزا کا سامنا کر رہے مبینہ جاسوس كلبھوشن جادھو مسئلہ میں بین الاقوامی عدالت میں پاکستان کو جھٹکا لگا ہے. بھارت کی دلیلوں سے متفق ہوتے ہوئے بین الاقوامی کورٹ نے آخری فیصلے تک كلبھوشن جادھو کی پھانسی کی سزا پر روک لگا دی ہے. ايسيجے نے کہا کہ بھارت پاکستان ویانا معاہدے کے تحت مصروف عمل ہے. کورٹ نے کہا کہ پاکستان کو کونسلر رسائی دینا چاہئے اور سفارتی مدد ملنی چاہئے. اتنا ہی نہیں بین الاقوامی کورٹ کو اس معاملے میں سماعت کا حق ہے.


کورٹ نے کہا، معاہدے کے تحت پاکستان کو کونسلر رسائی حاصل کرنا چاہئے اور پاک کا جاسوس کا دعوی ثابت نہیں ہوتا ہے. اتنا ہی نہیں جادھو کی گرفتاری ایک متنازعہ مسئلہ ہے. کورٹ نے کہا کہ دونوں ملک سمجھتے ہیں کہ كلبھوش جادھو بھارتی ہے. جسٹس رونی ابراہیم نے کہا کہ بھارت نے طے وقت سرحد پر جادھو کی پھانسی کے لئے اپیل نہیں کی.
پاکستان کی دلیل
– بھارت کو كلبھوش معاملے کو ايسيجے میں لانے کا حق نہیں ہے، کیونکہ ویانا معاہدے جاسوسوں، دہشت گردوں اور جاسوسی سے وابستہ لوگوں پر لاگو نہیں ہوتی.
– قریشی نے یہ بھی کہا کہ بھارت نے اس سال جنوری میں پاکستان کے اس رابطہ کا کوئی جواب نہیں دیا، جس جادھو سے متعلق معاملے کی جانچ کے لئے اس سے تعاون مانگا گیا تھا.

سالوے نے جادھو کی گرفتاری، اس کے خلاف چارج شیٹ داخل کرنے اور معاملے کی سماعت سے متعلق تمام کارروائی کو ووےكشوني طریقے سے اقوام متحدہ کے چارٹر اور ویانا معاہدے کی خلاف ورزی قرار دیا تھا.
– من گھڑت الزامات کے تناظر میں انہیں اپنا دفاع کرنے کے لئے قانونی امداد مہیا نہیں کرائی گئی.
– سالوے نے عدالت سے کہا کہ 16 مارچ، 2016 کو ایران میں جادھو کو اغوا کیا گیا اور پھر پاکستان لا کر مبینہ طور پر بھارتی جاسوس کے طور پر پیش کیا گیا اور فوجی حراست میں ایک مجسٹریٹ کے سامنے ان سے كبولناما لیا گیا.
– جادھو سے کوئی رابطہ نہیں کرنے دیا گیا اور سماعت بھی اےكتپھا کی گئی.

– پاکستان کی آرمی کورٹ نے جادھو کو ‘ون مین ڈملشن سكوڈ’ بتاتے ہوئے 10 اپریل کو پھانسی کی سزا سنائی.
– الزام خط میں كلبھوش پر لگائے گئے الزامات میں انہیں ہالی وڈ فلموں کے کریکٹر ‘رےبو’ کی طرح پیش کیا گیا ہے، جو پائپ لائنوں میں دھماکے کرتا ہے، کیمپوں میں IEDs پلانٹ کرتا ہے اور تمام طرح کی ودونسک سرگرمیوں کو انجام دیتا ہے.
– گوادر، تربت میں ہوئے حملوں کو سپنسر کرنا. جواني بندرگاہ پر بوٹ اور رےڈار اسٹیشن پر حملے.
– بلوچستان میں پاکستانی نوجوانوں کو بھڑکانے کے لئے علیحدگی پسند اور دہشت گرد عناصر کی مالی امداد دی. بلوچستان کے رنگا علاقے میں گیس پائپ لائنوں میں دھماکے کرائے.

– 2015 میں کوئٹہ میں ہوئے دھماکوں کو سپنسر کیا. اس میں جان و مال کو کافی نقصان پہنچا. کوئٹہ کے هجراس اور شیعہ شردھالوؤں پر حملے بھی کرائے.
– 2014-15 تربت، پجگر، گوادر، پسني اور جواني میں ریاست دشمن عناصر کی مدد سے حملے کیے. بہت شہری اور فوجی ہلاک اور زخمی ہوئے.

Copyright © Dailyaag - All Rights Reserved

Scroll to top