گجرات راجیہ سبھا الیکشن: احمد پٹیل جیتے، شاہ اور ایرانی نے بھی ایوان بالا میں میںاپنی جگہ بنا لی

احمد آباد / نئی دہلی. گجرات میں ہوئے راجیہ سبھا انتخابات میں آج کانگریس امیدوار احمد پٹیل نے بی جے پی کے امیدوار بلونت سنگھ راجپوت کو شکست دی. اس سے پہلے دیر رات تک چلے ڈرامائی واقعات میں الیکشن کمیشن نے انتخابات قوانین کی خلاف ورزی کرنے پر اہم اپوزیشن پارٹی کے دو غیر مطمئن ممبران اسمبلی کے ووٹ غلط کر دیے تھے جس سے کانگریسی خیمے میں خوشی کا ماحول دیکھنے کو ملا.

الیکشن کمیشن کے ایک افسر نے بتایا کہ کانگریس صدر سونیا گاندھی کے سیاسی سیکرٹری پٹیل کو 44 ووٹ ملے جبکہ راجپوت کو 38 ووٹوں سے اکتفا کرنا پڑا.

حال تک راجپوت ریاست اسمبلی میں کانگریس کے اہم انتباہ تھے اور پارٹی چھوڈقر بی جے پی میں آ گئے تھے.

بی جے پی صدر امت شاہ نے بھی ان انتخابات میں جیت کر پہلی بار راجیہ سبھا میں داخل ہوئے ہیں۔ ان کے ساتھ موجودہ راجیہ سبھا رکن اور اطلاعات اور نشریات کے وزیر اسمرتی ایرانی نے بھی اپنی جگہ برقرار رکھی ہے. ایک اہلکار کے مطابق دونوں کو 46-46 ووٹ ملے ہیں.

الیکشن جیتنے کے اعلان کے بعد احمد پٹیل نے کہا، یہ صرف میری جیت نہیں ہے. یہ دولت، قوت بازو کے دھڑلے سے استعمال اور ریاستی مشینری کے غلط استعمال کی شکست ہے.

 

انہوں نے کہا، میں خوش ہوں اور اپنی پارٹی کی قیادت، آپ ممبران اسمبلی اور تمام کارکنوں کا شکریہ ادا جتانا چاہتا ہوں جنہوں نے ایک خاندان کی طرح کام کیا. یہ ایک مشکل انتخاب تھا جس ہمیں کامیابی ملی.

اس ڈرامائی فتح کے ساتھ پٹیل پانچویں بار اعلی ایوان میں پہنچنے میں کامیاب ہوئے ہیں.

اس سے پہلے ووٹوں کی گنتی شروع ہونے کے بعد چند منٹ کے لئے روک دی گئی تھی جب بی جے پی نے دعوی کر دیا کہ دو اور کانگریسی ممبران اسمبلی نے غیر مجاز لوگوں بیلٹ دکھا کر انتخابات قوانین کی خلاف ورزی کی.

 

حالانکہ کانگریس اور بی جے پی کے ذرائع نے کہا کہ کچھ دیر کے بعد ووٹوں کی گنتی کے بعد شروع ہو گئی.

ادھر کانگریس کو بڑی راحت دیتے ہوئے الیکشن کمیشن نے گجرات راجیہ سبھا انتخابات میں اس کے دو اراکین اسمبلی کے ڈالے گئے ووٹوں کو ووٹ کی رازداری کی خلاف ورزی کرنے کی صورت میں آج دیر رات مسترد کر دیا.

کمیشن نے الیکشن افسر سے کانگریس ممبر اسمبلی بھولابھاي گوہل اور راگھوجي بھائی پٹیل کے ووٹ کو الگ کر کے ووٹوں کی گنتی کرنے کو کہا.

 

کمیشن کے حکم کے مطابق ووٹنگ کے عمل کا ویڈیو فوٹیج دیکھنے کے بعد پتہ چلا کہ دونوں ممبران اسمبلی نے ووٹ کی رازداری کی خلاف ورزی کی تھی.

کانگریس نے آج الیکشن کمیشن میں عرضی داخل کر مطالبہ کیا تھا کہ ان کے ووٹ منسوخ شدہ جائیں کیونکہ انہوں نے غیر مجاز لوگوں کو اپنے ووٹ دکھائے.

Leave a Comment

Copyright © Dailyaag - All Rights Reserved

Scroll to top